عمران خان

بیرونِ ملک مقیم ہنر مند پاکستانی ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں، عمران خان

اسلام آباد (گلف آن لائن) وزیر اعظم عمران خان نے کہاہے کہ بیرونِ ملک مقیم ہنر مند پاکستانی ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں، پاکستانی سفارتخانے وفاقی وزراتِ تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت اور وزارت اوور سیز کے ساتھ تعاون سے ہنر مند افراد قوت کی برآمد کو یقینی بنائیں،ترجیحی شعبوں میں اقدامات کیلئے تعین شدہ وقت کا خاص خیال رکھا جائے۔ جمعہ کو وزیرِ اعظم عمران خان کی زیرِ صدارت ترجیحی شعبوں کا جائزہ اجلاس ہوا جس میں بیرونِ ملک افرادی قوت، چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے انتظامی طریقہ کار کو سہل بنانے اور وزیرِ اعظم کے بیرونِ ملک دوروں پر دستخط شدہ مفاہمتی یادداشتوں پر پیش رفت سے آگاہ کیا گیا۔ وزیر اعظم کو بتایاگیاکہ افرادی قوت کی برآمدات بڑھانے کیلئے اوور سیز ایمپلائمنٹ پورٹل کا اجراء کیا گیا ہے،پورٹل بیرونِ ملک روزگار کے مواقع اور امیدواروں کے درمیان ایک رابطے کا کام کر رہا ہے۔

اجلاس کو بتایاگیاکہ پورٹل سے عالمی سطح پر درکار سکل سیٹ کی نشاندہی بھی ہو رہی ہے،پورٹل بیرونِ ملک روزگار کے اہل امیدواروں کو شفاف طریقے سے روزگار کی تلاش میں معاون ثابت ہو رہا ہے،مقامی ہنر مند افراد کو بیرونِ ملک روزگار کے حصول میں معاونت کیلئے حکومت کی طرف سے لائحہ عمل تیار ہے۔ بتایاگیاکہ پہلے مرحلے میں ترجیحی شعبوں اور ممالک کی نشاندہی کر لی گئی ہے،وزارتِ وفاقی تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت نشاندہی کئے گئے شعبوں میں تربیت فراہم کرے گی۔ بتایاگیاکہ اب تک وزرات کے تحت تربیت شدہ 50 ہزار لوگ بیرونِ ملک مختلف شعبوں میں خدمات کے ذریعے 2.6 ارب ڈالر کا زرمبادلہ بھیج چکے ہیں،نیشنل ایکریڈیٹیشن کونسل اب تک پانچ بین الاقوامی اداروں سے سرٹیفیکیشن حاصل کرکے مزید اداروں سے مذاکرات کر رہی ہے۔وزیرِ اعظم نے ہنر مند افرادی قوت کی برآمد بڑھانے کیلئے اقدامات کو جلد مکمل کرنے کی ہدایات جاری کیں۔

اجلاس کو وزیرِ اعظم کے بیرونِ ملک دوروں میں دستخط شدہ مفاہمتی یادداشتوں پر پیش رفت سے بھی آگاہ کیا گیا۔بتایاگیاکہ مفاہمتی یادداشتوں پر ترجیحی بنیادوں پر کام کرکے ان پر عملدرآمد جاری ہے،جن منصوبوں پر عملدرآمد میں رکاوٹوں کا سامنا تھا ان کو بھی دور کر کے جلد کام مکمل کر لیا جائے گا۔اجلاس کو چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے انتظامی طریقہ کار کو سہل بنانے پر بھی بریفنگ دی گئی۔ اجلاس کو بتایاگیاکہ چھوٹے درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے انتظامی اصلاحات پر عملدرآد تیزی سے جاری ہے،پیلے اور دوسرے مرحلے میں 98 اور 96 فی صف کام مکمل ہے جبکہ حال ہی میں اجراء شدہ تیسرے مرحلے میں بھی ترجیحی بنیادوں پر کام جاری ہے۔ اجلاس کو بتایاگیاکہ آسان کاروبار پورٹل پر کام مکمل ہے جس کا جلد اجراء کر دیا جائے گا۔

بتایاگیاکہ 21 شعبوں کے 58 اداروں میں 68 اصلاحات کا نفاذ کیا جا رہا ہے،اصلاحات سے چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے آسانی اور روزگار کے مواقع پیدا ہونگے۔ اجلاس کو بتایاگیاکہ پورٹل پر فیڈـبیک کا طریقہ کار بھی واضح کیا گیا ہے جس سے شعبے سے براہِ راست رائے موصول ہوگی،اشیائِ خورد نوش کے معیار کو پورے ملک میں یکسان کرنے کیلئے سٹینڈرڈز جاری کر دیے گئے ہیں جن کو تمام صوبے متفقہ طور پر رائج کریں گے۔ اجلاس کو سرمایہ کاری کے شعبے میں رکاوٹوں اور ان کے حل کیلئے حکومت کے اقدامات سے بھی آگاہ کیا گیا. وزیرِ اعظم نے رکاوٹوں کو جلد حل کرنے کی ہدایات جاری کیں۔ بتایاگیاکہ ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی تمام تر این او سی کے ڈیجیٹل اجراء کا کام بھی جلدمکمل کرلے گی۔ بتایاگیا کہ بیرونِ ملک سے فضلے کی درآمد پر جامع حکمتِ عملی مرتب کی جا رہی ہے اور مقامی فضلے کو متبادل کے طور پر استعمال کرنے کیلئے اقدامات کئے جا رہے ہیں،پیمرا کی طرف سے ہوٹل مالکان کو علیحدہ سے کیبل لائسنس جاری کرنے پر نظر ثانی کی جا رہی ہے۔اجلاس میں وفاقی وزیر تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت شفقت محمود، مشیرِ تجارت عبدالرزاق داؤد، مشیرِ قومی سلامتی ڈاکٹر معید یوسف اور متعلقہ اعلی افسران کے علاوہ چاروں صوبوں کے چیف سیکرٹریز نے وڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی ۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہاکہ بیرونِ ملک مقیم ہنر مند پاکستانی ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں،نوجوانوں کو بین الاقوامی معیار کی پیشہ ورانہ تربیت فراہم کرنا حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔ وزیر اعظم نے کہاکہ پاکستانی سفارتخانوں کو اس حوالے سے ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ وفاقی وزراتِ تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت اور وزارت اوور سیز کے ساتھ تعاون سے ہنر مند افراد قوت کی برآمد کو یقینی بنائیں۔ وزیر اعظم نے کہاکہ پاکستان میں پہلی مرتبہ اس حوالے سے جامع حکمتِ عملی مرتب کی گئی ہے،تمام ادارے باہمی تعاون سے افرادی قوت کی بین الاقوامی کھپت کو مد نظر رکھتے ہوئے منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے کہاکہ حکومت چھوٹے اور درمیانے طبقے کے کاروبار کو ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کیلئے پر عزم ہے،ترجیحی شعبوں میں اقدامات کیلئے تعین شدہ وقت کا خاص خیال رکھا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں