شہباز شریف ،حمزہ شہباز

منی لانڈرنگ کیس ،شہباز شریف ،حمزہ شہباز کی عبوری ضمانتوں میں 4 جنوری تک توسیع

لاہور( گلف آن لائن)لاہور کی بینکنگ جرائم کورٹ نے منی لانڈرنگ کیس میں مسلم لیگ(ن) کے صدر شہباز شریف اور پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز کی عبوری ضمانتوں میں 4 جنوری تک توسیع کرتے ہوئے آئندہ سماعت پر وکلاء کو عدالتی دائرہ اختیار پر دلائل دینے کیلئے طلب کر لیا۔عبوری ضمانت کی معیاد ختم پر شہباز شریف ، حمزہ شہباز عدالت میں پیش ہوئے۔

فاضل جج نے استفسا رکیاایف آئی اے نے دوسری عدالت میں چالان کیوں جمع کرایا۔ جس پر ایف آئی اے کے وکیل نے کہاکہ گزشتہ سماعت پر کچھ غلط فہمی کی وجہ سے اس عدالت میں چالان جمع کرانے کا کہا گیا۔ شہبازشریف کے وکیل امجد پرویز ایڈووکیٹ نے کہا کہ اس مقدمے میں نو ملزمان نے ضمانت کے لیے اس عدالت سے رجوع کیا ہے ۔ایف آئی اے نے تفتیش مکمل کرنے کے لیے وقت مانگا پھر کہا یہ ملزم نہیں ہمارے گواہ ہیں ۔

ایف آئی اے نے شہباز شریف اور حمزہ شہباز کی درخواست ضمانت مسترد کرنے کا کہا ،یہی عدالت اسی مقدمے میں دو ملزمان کی عبوری ضمانت کنفرم کر چکی ہے ۔فاضل جج نے استفسار کیا ایف آئی اے نے کن سیکشنز کے تحت چالان جمع کرایا ہے ۔ایف آئی اے کے وکیل نے بتایا کہ چالان کے پہلے صفحے پر تمام دفعات درج ہیں ۔شہباز شریف نے کہا کہ مجھے تو چالان کی کاپی ہی نہیں ملی ۔ جس پر فاضل عدالت نے کہا کہ آپ کو کاپی دے دیتے ہیں۔

ایف آئی اے کے وکیل نے کہاکہ شہباز شریف تفتیش میں قصور وار پائے گئے ہیں،سلمان شہباز کی گرفتاری پر منی لانڈرنگ میں ان کا کرداربھی سامنے آئے گا ۔فاضل جج نے ایف آئی اے کے وکیل سے پوچھا دو دفعات کے تحت چالان جمع کرایا گیا ہے ،کیاان دفعات کے تحت اس عدالت کو مقدمہ سننے کا اختیار ہے ۔عدالت نے شہبازشریف اور حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں4جنوری تک توسیع کرتے ہوئے آئندہ سماعت پر وکلاء کو عدالتی دائرہ اختیار پر دلائل دینے کے لئے طلب کر لیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں