صنعت

وزیر اعظم ہماری صنعت کے مسائل کے حل کیلئے با اختیار فوکل پرسن مقررکریں ‘ کارپٹ ایسوسی ایشن

لاہور/کراچی (گلف آن لائن)پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے کہا ہے کہ ہاتھ سے بنے ہوئے قالینوں کی برآمدات میںتنزلی حکومت کی فی الفورتوجہ کی متقاضی ہے ،پاکستان افغانستان کی مددکیلئے پوری دنیا اورعالمی اداروں سے مالی امداد کی اپیل کر رہا ہے لیکن جن شعبوںکے ذریعے ہم لاکھوںافغانیوںکو ان کی دہلیز پر روزگار فراہم کر کے مدد دے رہے ہیںلیکن اس سے جڑے ہوئے مسائل کے حل پر توجہ نہیں دی جارہی ،وزیر اعظم عمران خان سے اپیل ہے کہ ہمارے مطالبات کو زیر غور لایا جائے اورمسائل کا حل نکالا جائے۔ ان خیالات کا اظہار کارپٹ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے چیئر پرسن پرویز حنیف ،ایسوسی ایشن کے گروپ لیڈر عبد اللطیف ملک،وائس چیئرمین اعجاز الرحمان،سینئر ایگزیکٹو ممبر ریاض احمداورسعید خان نے مشترکہ بیان میں کیا ۔

انہوںنے کہا کہ سرکاری ادارے برآمدی مینوفیکچررز اوربرآمدکنندگان کے مسائل کو سمجھنے کیلئے ہی تیار نہیں جس کی وجہ سے مسائل پیچیدہ صورت اختیار کر رہے ہیں ، افغانستان کے ہنر مندوں کی جانب سے طورخم کے راستے پاکستان بھجوایا جانے والاجزوی تیار مال حتمی تیاری کے بعد ہاتھ سے بنے قالینوں کی صورت میںبرآمد کر دیا جاتا ہے لیکن اس میں بلا وجہ رکاوٹیں ڈالی جاتی ہیں۔

وزیر اعظم عمران خان ، مشیر خزانہ شوکت ترین ، مشیر تجارت عبدالرزاق دائود سے مطالبہ ہے کہ ہماری صنعت کے مسائل کے حل کیلئے با اختیار فوکل پرسن مقررکیا جائے جو ہمارے مطالبات سے آگاہی حاصل کرکے حکومتی ذمہ داران تک پہنچائے اوراداروں سے متعلقہ مسائل کے حل کیلئے بھی اپنا موثر کردار ادا کرے ۔انہوںنے کہا کہ برآمدات اور درآمدات کے حجم میں خلیج بڑھتی جارہی ہے اور پاکستان بگڑتے توازن کا متحمل نہیں ہو سکتا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں