چین

چین کی امریکہ اور برطانیہ کے سنکیانگ سے متعلق عائد کردہ غیر معقول الزامات کی سختی سے تردید

بیجنگ (نمائندہ خصوصی) اقوام متحدہ میں چین کے نائب مستقل نمائندے دائی بنگ نے سلامتی کونسل کی “عالمی قانون کی خلاف ورزیوں کے لیے جوابدہی کو مضبوط بنانے اور امن و سلامتی کو برقرار رکھنے پر ان کے اثرات” کے موضوع پر  منعقدہ  کھلی بحث  میں شرکت کی اور چین کے موقف کی جامع وضاحت کی۔انہوں نے امریکہ اور برطانیہ کے نمائندوں کے عائد کردہ غیر معقول الزامات کی بھی سختی سے تردید کی۔

دائی بنگ نے نشاندہی کی کہ احتساب کو عالمی قانون کی سالمیت اور اتحاد کو برقرار رکھنا چاہیے۔ عالمی قانون کی خلاف ورزیوں کے لیے جوابدہ ہونے کے لیے، ہمیں سب سے پہلے “عالمی قانون کی خلاف ورزیوں” پر ایک معروضی اور منصفانہ فیصلہ کرنا چاہیے، جس کے لیے عالمی قانون کے “سلیکٹو” اطلاق کے بجائے مساوی اور یکساں اطلاق کی ضرورت ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ احتساب کو کبھی بھی چند ممالک کے جغرافیائی سیاسی مفادات کو پورا کرنے کے لیے سیاسی آلے کے طور پر استعمال نہیں کیا جانا چاہیے۔دائی بنگ نے واضح کیا کہ سنکیانگ سے متعلق امریکہ اور برطانیہ کی جانب سے پھیلائے جانے والے جھوٹ کی کوئی حیثیت نہیں اور یہ عمل اس حقیقت پر پردہ نہیں ڈال سکتا  کہ سنکیانگ کا معاشرہ مستحکم اور خوشحال ہے اور لوگ امن کے ساتھ رہتے اور کام کرتے ہیں۔ سنکیانگ کا دورہ کرنے والا کوئی بھی شخص کبھی بھی امریکہ اور برطانیہ کے جھوٹ سے اتفاق نہیں کرے گا بلکہ اس  سے امریکہ کا  انسانی حقوق کے مسئلے کو سیاسی آلہ کار بنانے کا فن مزید بے نقاب ہو گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں