چینی صدر شی جن پھنگ

چینی صدر کا دورہ سعودی عرب اطراف کے ما بین اعلیٰ ترین سفارتی سرگرمی قرار

بیجنگ (نمائندہ خصوصی)چینی صدر شی جن پھنگ چین-عرب سمٹ اور چین -خلیج تعاون کونسل سمٹ میں شرکت اور سعودی عرب کے سرکاری دورے کے لیے ریاض پہنچ چکے ہیں،یہ عوامی جمہوریہ چین کے قیام کے بعد فریقین کے درمیان اعلیٰ ترین سفارتی سرگرمی ہے۔جمعرات کے روز چینی میڈ یا کے مطا بق چین اور عرب ممالک کے درمیان دیرپا ہم آہنگ بقائے باہمی برقرار رہی ہے جس کی ایک اہم وجہ مشرق وسطیٰ کے حوالے سے چین کا موقف ہے۔

سال دو ہزار سولہ میں شی جن پھنگ نے مشرق وسطیٰ میں مسائل کے حل کے لیے یہ تجاویز پیش کیں کہ اختلافات کو دور کرتے ہوئے بات چیت کو مضبوط بنایا جائے،اپنے اپنے ملکی تقاضوں کے مطابق راستوں کا انتخاب کیا جائے۔مثلاً ،امریکہ اس خطے میں ایران کا استعمال کرتے ہوئے کشیدگی کو بڑھانے کی کوشش کرتا رہا ہے،جب کہ چین نے 2016 میں سعودی عرب،مصر اور ایران کا بھی دورہ کیا تھا۔ماہرین کا کہنا ہے کہ چین تمام عرب ممالک کے ساتھ دوستانہ تعاون کے تعلقات برقرار رکھے ہوئے ہے جو ان ممالک کے باہمی مفاہمت میں کردار ادا کر سکتا ہے۔

عرب ممالک کے عوام چین کے بارے میں مثبت تاثرات رکھتے ہیں اور چین دنیا میں واحد ملک ہے جس کا عرب ممالک کے ساتھ کبھی کوئی تنازع سامنے نہیں آیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں