سندھ ہائی کورٹ

دعا زہرا کیس،سندھ ہائیکورٹ کا ملزمان کے بینک اکاونٹس، قومی شناختی کارڈ بلاک کرنےکاحکم

کراچی (گلف آن لائن ) سندھ ہائیکورٹ نے دعا زہرا کیس میں ملزمان کے بینک اکانٹس منجمد اور قومی شناختی کارڈ بلاک کرنے کے لیے نادرا اور اسٹیٹ بینک کو حکم دے دیا۔ سندھ ہائی کورٹ میں جمعہ کو دعا زہرا کیس کی سماعت ہوئی۔آئی جی سندھ پولیس غلام نبی میمن عدالت میں پیش ہوئے اور بتایا کہ کل مجھے آئی جی تعینات کیا گیا ہے۔ غلام نبی میمن نے عدالت کو بتایا کہ اس کیس میں پولیس نے متعلقہ 16 افراد گرفتار کیے،3 کو پوچھ گچھ کے بعد چھوڑدیا اور1 نے ضمانت کرالی جبکہ 12 لوگ گرفتار ہیں۔ جسٹس اقبال کلہوڑونے استفسار کیا کہ کیا پولیس کو کوئی کامیابی ملی ہے اوراب تک کیا ملا ہے؟۔

آئی جی نے بتایا کہ پولیس کے پاس کچھ مصدقہ اطلاعات ہیں اورکوشش کررہے ہیں۔آئی جی سے عدالت نے استفسار کیا کہ ملزمان کی کون حمایت کررہا ہے اور کوئی تو ان کے پیچھے ہیں،ہم محسوس کررہے ہیں کہ یہ انسانی اسمگلنگ کا کیس ہے۔ آئی جی نے بتایا کہ ظہیر کا والد جامعہ پنجاب کے رجسٹرار کا ڈرایﺅر تھا اور وہ لوگ اپنے تعلقات کو استعمال کررہے ہیں۔عدالت کی جانب سے استفسار کیا گیا کہ کیا لاہورہائی کورٹ میں کوئی پیش ہوا ہے اور اب تک کیا ظہیرکے خاندان کا کوئی فرد آیا ہے۔ جسٹس اقبال کلہوڑو نے ریمارکس دئیے کہ ہم چاہتے ہیں کہ دعا زہرا آجائے اور بیان دے دے، کیس یہاں ہوا ہے اور یہیں چلنا چاہئے۔ دعا زہرا کے والد نے عدالت کو بتایا کہ ہم بہت پریشان ہیں اور عدالت کچھ کرے، ہم بڑی امیدیں لگا کر یہاں آتے ہیں۔ جسٹس اقبال کلہوڑو نے ریمارکس دئیے کہ عدالت کا جو بھی اختیار ہے وہ کررہی ہے، ہم ہر ممکن اقدامات کیلئے حکم دے رہے ہیں۔ آئی جی سندھ نے بتایا کہ ہم نے 7 ٹیمیں بچی کی بازیابی کیلئے بھیجی ہیں۔

عدالت نے واضح کردیا کہ جب تک بچی نہیں آئے گی، یہ معاملہ چلتا رہے گا تاہم ہم بار بار حکم دے چکے ہیں مگرکچھ نہیں ہورہا ہے۔ آئی جی سندھ نے عدالت کو یقین دلایا کہ میں ذمہ داری کے ساتھ کہتا ہوں کہ محنت اور ایمانداری میں کوئی کمی نہیں چھوڑیں گے۔ جسٹس اقبال کلہوڑونے آئی جی سندھ سے استفسار کیا کہ ہمیں ٹائم فریم دیں کہ کب بچی کو پیش کریں گے؟۔ آئی جی سندھ نے عدالت کو بتایا کہ ہم ایمانداری سے کوشش کررہے ہیں کہ بچی کو جلد بازیاب کروائیں۔ دعا زہرا کیس میں سندھ ہائی کورٹ نے وفاق اورایف آئی ا ے کو فریق بنانے کا حکم دے دیا ہے۔ ڈی جی ایف آئی اے کو سرحدی علاقوں کی نگرانی اور کارروائی کا حکم دیا ہے۔ عدالت نے ایف آئی اے کو نوٹس جاری کردیا اور حکم دیا کہ لڑکی کو بیرونِ ملک منتقلی سے روکا جائے۔ عدالت نے نادرا اور اسٹیٹ بینک کو ملزمان کے بینک اکانٹس منجمد کرنے کا حکم دیا اور نامزد ملزمان کا قومی شناختی کارڈ بھی بلاک کرنے کا حکم دے دیا۔ عدالت نے سابق آئی جی کامران فضل کو جاری کردہ شوکاز نوٹس واپس لے لیا۔ عدالت نے سماعت 10 جون تک کیس کی سماعت ملتوی کردی اور دعا زہرا کو پیش کرنے کا حکم دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں