حنا ربانی کھر

امریکہ کے افغانستان سے انخلاء کے انداز نے اس خطے پر ایسے اثرات مرتب کیے جن کے ساتھ ہمیں رہنا پڑے گا،حنا ربانی کھر

اسلام آباد(گلف آن لائن)سابق وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے کہا ہے کہ امریکہ کے افغانستان سے انخلاء کے انداز نے اس خطے پر ایسے اثرات مرتب کیے جن کے ساتھ ہمیں رہنا پڑے گا،امریکہ کی جانب سے آسیان اور اس خطے ہر توجہ نے بہت سے ممالک کو اپنے مسائل کے حل کے لیے دور دراز ممالک کی جانب دیکھنے پر مجبور کیا مارگلہ ڈائیلاگ سے خطاب کرتے ہوئے انہوںنے کہاکہ 2010 تک اس خطے کی جیو پالیٹکس مین زیادہ تبدیلی نہیں آئی تھی۔

انہوںنے کہاکہ امریکہ کی توجہ ایشیا پر آنے کے بعد تیزی سے جیو پالیٹکس میں تبدیلیاں آئیں ،امریکہ کو روس اور تیزی سے ابھرتے چین سے خطرات لاحق ہوئے۔ امنہوںنے کہاکہ امریکہ کی جانب سے ایک غیر جمہوری و غیر سیکولر بھارت کی جانب جھکاء کیا گیا،امریکہ نے اس حوالے سے بھارت سے متعلق ہر چیز کو نظر انداز کیا۔ انہوںنے کہاکہ امریکہ کے افغانستان سے انخلاء کے انداز نے اس خطے پر ایسے اثرات مرتب کیے جن کے ساتھ ہمیں رہنا پڑے گا۔ انہوںنے کہاکہ امریکہ کی جانب سے آسیان اور اس خطے ہر توجہ نے بہت سے ممالک کو اپنے مسائل کے حل کے لیے دور دراز ممالک کی جانب دیکھنے پر مجبور کیا۔

انہوںنے کہاکہ چین جو کچھ کر رہا ہے دیگر ممالک اس کو خطرہ سمجھ کر ردعمل دے رہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ماضی میں ہم اور دیگر ممالک انفراسٹرکچر فنڈنگ کے لیے مدد مانگ رہے تھے۔ انہوںنے کہاکہ امریکہ اور دیگر ممالک کی افغانستان میں انسداد دہشت گردی کی حکمت عملی نے وہاں بہت دہشت گردوں کو جنم دیا،ہم نے طویل عرصہ تک افغانستان مین سویت موجودگی کے اثرات برداشت کیے،اب ہم افغانستان کے امریکہ کے اسطرح سے انخلاء کے اثرات برداشت کر رہے ہیں۔

انہوںنے کہاکہ نائن الیون کے انتقام میں کیے گئے فیصلوں کے نتیجہ میں اس خطے میں لاکھوں افراد مہاجر بنے۔حنا ربانی کھر نے کہاکہ پاکستان کی جانب سے مختلف حکومتوں میں کہی گئی بہت سے چیزیں درست ثابت ہوئیں ،ہم نے ہمیشہ کہا کہ امریکہ کی جانب سے انسداد دہشت گردی مزید دہشت گردوں کو جنم دے رہی ہے،پاکستان نے بارہا کہا کہ راتوں رات 3لاکھ فوج تیار نہ کی جائے وگرنہ وہ مختلف بلاکس میں بٹ جائے گی۔

انہوںنے کہاکہ کرپشن، گھوسٹ افواج، ٹھیکیداروں، نااہل افغان حکومت اور امریکی ہواٰیی مداد پر انحصار کے باعث آج کیافغانستان کی وجہ بنی،دنیا افغانستان میں ایک المیے کو روکنے کی بجایے اس کے جنم کا باعث بن رہی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں