شاہ محمودقریشی

شاہ محمود قریشی کا نیب ترامیم کو عدالت میں چیلنج کرنے کا اعلان

اسلام آباد (گلف آن لائن)پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی نے نیب ترامیم کو عدالت میں چیلنج کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہاہے کہ نیب کے قوانین اور انتخابی اصلاحات میں تبدیلی ایک خاص طبقے کو فائدہ پہنچانے کیلئے کی گئی ہیںہے ،نیب ترامیم کا مقصد پی پی اور ن لیگ کی قیادت کو بچانا ہے،سیکشن 14 کا فائدہ نواز شریف کو ہوگا ،،سپریم کورٹ کو معاملے پر ازخود نوٹس لینا چاہیے ، ملک ریاض اور آصف زردادی کی آڈیو بے بنیاد ہے، ، عمران خان کسی ٹائیکون سے پیچ اپ کرانے کا نہیں کہہ سکتے،ہم کیوں آڈیو کی تحقیقات کا مطالبہ کریں،ملک میں صاف شفاف انتخابات کیلئے ہماری جستجو جاری رہے گی۔

وائس چیئر مین پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی نے کہاکہپی ڈی ایم مختلف گروپ پر مشتمل ہے ان کا نصب العین بھی مختلف ہے۔انہوںنے کہاکہ انہوں نے مل کر ملک کی اینٹی کرپشن مہم کو نیب ترامیم میں دفن کردیا ہے، درحقیقت انہوں نے اپنے آپ کو این آر او ٹو دیا ہے، جب ہم ایف اے ٹی ایف کی قانون سازی کر رہے تھے، اس وقت مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے نمائندے بھی وہاں موجود تھے۔انہوںنے کہا کہ انہوں نے قانون سازی کے بجائے ایک مسودہ ہمارے ہاتھ میں تھمایا جس میں نیب قوانین میں ترامیم کی تجویز دی گئی تھی، اس وقت ان کی جانب سے 34،35 ترامیم پیش کی تھی اور شرط عائد کی گئی تھی کہ وہ اس پر پیش رفت کے بعد ایف اے ٹی ایف کی قانون سازی میں تعاون بھی کریں گے اور گفتگو بھی کریں گے۔

انہوںنے کہاکہ یہ جو قوانین میں ترامیم انہوں نے اسمبلی اور سینیٹ سے منظور کروائی ہیں اس میں 24 سے زائد ترامیم وہی ہیں جو ہمیں سونپی گئی تھیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ عمران خان سے این آر او نہ ملنے پر یکجاں ہوئے اور ترمیم پیش کیے۔پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ ان ترامیم سے ایک خاص امیر طبقہ مستفید ہوگا جس میں ملک کو لوٹنے والے اور اہم سیاسی شخصیات شامل ہیں، نیب کے قانون میں جو ترامیم کی گئی ہیں وہ کرپشن کے خلاف اقوام متحدہ کے قوانین سے متضاد ہیں اور ایف اے ٹی ایف کے قوانین سے بھی مطابقت نہیں رکھتی ہیں۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ تحریک انصاف کی استدعا ہے کہ سپریم کورٹ اس معاملے پر ازخود نوٹس لینا چاہیے اور یہ ہم اس لیے کہہ رہے کہ اسفند یار ولی کیس میں عدالت یہ کہہ چکی ہے کہ اگر نیب قوانین میں کوئی ترامیم کی جاتی ہیں تو وہ سپریم کورٹ کے علم میں لائی جائے۔انہوںنے کہاکہ یہ قانون سازی ایک فقط اپنے مقصد کے لیے کی گئی ہے، اس پر تحریک انصاف کا ماننا ہے کہ اس ترامیم سے نیب کا محکمہ بے معنی ہوگیا ہے، نیب کو جو قانونی آزادانہ حیثیت حاصل تھی اب اس پر سمجھوتہ ہوگیا ہے اور ادارہ وفاقی حکومت کے تابع ہوگیا ہے۔

انہوں نے نیب کو اینٹی کرپشن ڈیپارٹمنٹ پنجاب اور ایف آئی اے بنانے کی کوشش کی ہے جو سرکاری حکومت کے تابع ہوتے ہیں، اس ترمیم کے بعد نیب کے کیسز متاثر ہوں گے، ان میں سے 80 فیصد کیسز احتساب عدالت سے دیگر عدالتوں کو منتقل ہوجائے گے، اور کچھ کیسز واپس نیب کو منتقل کردئیے جائیں گے یہ ہی ان کا مقصد تھا۔انہوںنے کہاکہ انہوں نے کچھ ایسی شقوں میں تبدیلی کی ہے جو بینک کی لین دین سے متعلق ہیں، سیکشن 9، سب سیکشن اے 5 سے براہِ راست ہمارے وزیر اعظم شہباز شریف کو فائدہ پہنچے گا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سیکشن 14 میں جو ترمیم کی گئی ہے اس سے نواز شریف براہِ راست مستفید ہوں گے کیونکہ اس میں منی ٹریل کی ذمہ داری ختم کردی ہے، یہ بات واضح ہے کہ یہ ترمیم کس کو مستفید کرنے کے لیے اور کس کی خواہش پر کی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ انہوں نے بے نامی کی تعریف میں تبدیلی کردی ہے جس سے کیسز متاثر ہونے کا خدشہ ہے، باہر سے موصول کیے جانے والے شواہد نیب کیسز کے لیے کارآمد نہیں ہوں گے، اس ترمیم کے زریعے غیر ملک میں موجود اثاثوں کو محفوظ کیا گیا ہے۔انہوںنے کہاکہ ایس آر اوز سے متعلق تحقیقات کو ختم کردیا ہے، چاہے ایس آر او بد نیتی پر ہی کیوں مبنی نہ ہو، علاوہ ازیں، چیئرمین نیب کو گرفتاری کا اختیار تھا، لیکن اب قانون میں ایسی شرائط شامل کردی گئی ہیں کہ وہ بے اختیار ہوگئے ہیں اور کسی کو گرفتار نہیں کر سکتے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ اس سے قابل قانون میں درپیش مسائل کے حل کا اختیار صدر مملکت کو ہوتا تھا لیکن اب یہ اختیار وفاقی حکومت کو دے دیا گیا ہے اور وفاقی حکومت ان کی اپنی ہے۔

انہوںنے کہاکہ اس سلسلے میں تحریک انصاف نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم ان ترامیم کو چیلنج کریں گے عمران خان نے ہماری قانونی ٹیم کو ہدایت دے دی ہے کہ وہ چیلنج کریں۔انہوںنے کہاکہ دوسری ترمیم تحریک انصاف کی جانب سے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے دیا تھا اس قانون میں ترمیم کی ہے، کیونکہ یہ انہیں پسند نہیں آرہا ہے، ہماری نظر میں تین وجوہات تھی جس کی وجہ سے ہم سمجھتے تھے کہ بیرون ملک مقیم پاکستانی ووٹ کے حقدار کیوں ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانی ہماری معیشت میں بہت بڑے معاون ہیں، اور وہ ہمارا اثاثہ ہیں، ان کی ترسیلات سے یہ ملک چل رہا ہے، پچھلے سال 32 ارب ڈالر ان کی ترسیلات تھا۔شاہ محمود قریشی نے کہاکہ اس حساب سے اگر انہیں عزت دی گئی تھی تو وہ ان کا حق تھا جو پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے ان سے چھین لیا ہے۔انہوں نے کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانی اعلیٰ تعلیم یافتہ اور پیشہ ور ہیں، پالیسی کی تشکیل میں وہ اہم کردار ادا کر سکتے ہیں، ہماری رائے تھی کہ جب انہیں اسٹیک ہولڈرز بنا دیا جائیگا تو پالیسی کی تشکیل بہتر ہوسکتی تھی، اور اب بھی ہوسکتی ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے کا ایک مقصد یہ تھا کہ ان کی ایک نسل یہاں سے چلی گئی ہے، آنے والی نسلوں کو ان کے ملک سے دلچسپی لینے کے لیے کس طرح آمادہ کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ قوانین میں ترامیم کر کے پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) اس سوچ کو دفن کیا ہے کیونکہ ان کی رائے میں بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی واضح اکثریت اور ان کا جھکاؤ پی ٹی آئی کی طرف ہے۔انہوںنے کہاکہ بیرون ملک مقیم پاکستان کے شہری خود مختار ہیں ان کا جھکاؤ پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی طرف بھی ہوسکتا ہے لیکن قانون میں تبدیلی کر کے انہوں نے سب کا حق مار لیا ہے، ہم اس قانون میں ترمیم کو بھی چیلنج کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

انہوں نے قانون سازی میں الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے تعارف کو حذف کیا ہے۔شاہ محمود قریشی نے ای وی ایم کے تعارف کی وجوہات بیان کرتے ہوئے کہا کہ یہ تعارف جسٹس ناصر الملک کے زیر قیادت جوڈیشل کمیشن کی تجویز پر کروایا گیا تھا، انہوں نے ہمارے اعتراضات سننے ، لوگوں اور ماہرین کی رائے لینے کے بعد مجوزہ مرتب کیا اور قانون سازی کیلئے بھجوایا گیا،اس تمام تر معاملے میں انہوں نے لوگوں کے کیسز اور شکایات کا موازنہ کیا جس میں بیشتر میں کہا گیا تھا کہ پولنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد بیگز پہنچتے ہیں اور ریٹرننگ افسر دوبارہ کاؤنٹنگ شروع کرتے ہیں اس دوران گڑ بڑ ہوتی ہے۔انہوںنے کہاکہ ڈسکہ انتخابات میں مسلم لیگ (ن) نے بھی یہ ہی شکایات کی، اس سے لیے ہم نے ایسا طریقہ کار رائج کروایا جس سے شفافیت بڑھتی ہیں اور وقت کم ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس معاملے پر اعتراض اٹھایا گیا کہ ہمارے ملک کی آبادی ناخواندہ ہے، اگر بھارت کی جانب نظر دوڑائی جائے توہماری آبادی سے زیادہ ان کی آبادی ناخواندہ ہے وہاں یہ نظام کامیابی سے رائج ہے تو یہاں کیوں نہیں ہوسکتا۔انہوںنے کہاکہ یہ نظام اس لیے ختم کیا گیا ہے کہ اپنے من پسند نتائج میں گنجائش مل سکے 2018 میں قومی اور صوبائی اسمبلی سے انتخابات لڑ رہا تھا، اس وقت میں قومی اسمبلی سے چیت گیا جس کا غیر سرکاری نتیجہ 10 بجے موصول ہوا تھا لیکن صوبائی اسمبلی سے ہار گیا اور اس کا نتیجہ تاخیر سے موصول ہوا تھا۔انہوں نے کہا یہ بات واضح تھی کہ بیگز پہنچ گئے تھے اور مجھے ہرایا گیا، ایسے بہت سے کیسز ہیں پاکستان میں جس سے نمٹنے کے لیے ہم نے ای وی ایم متعارف کروائی تھی، تاکہ ٹیمپرنگ سے بچا جاسکے، بدقسمتی سے ہمارے ملک میں انتخابات میں من پسند نتائج کا رواج بن چکا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہاکہ 1970 کے بعد جتنے بھی انتخابات ہوئے اس پر گلہ کیا گیا ہے، 2013 کے انتخابات کو آصف علی زرداری نے آر او الیکشن قرار دیا تھا اور اس کی وجہ یہ نظام تھا، جب تک عوام کے فیصلے قبول نہیں کیے جائیں گے ملک مستحکم نہیں ہوگا۔انہوںنے کہاکہ 25 مئی کو آزادی مارچ کے دوران جو ہمارے کارکنوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کیا گیا، یہ سب اپنی جگہ اسلام آباد میں شیلنگ کے چشم دید گواہ آپ خود ہیں، وکلا پر جو تشدد ہوا اس کی مثال نہیں ملتی۔سابق وزیر نے کہاکہ وکلا پر تشدد کرنے سے پولیس ڈرتی ہے لیکن انہیں ہدایات تھی تشدد کرنے کی اس کی ویڈیوز موجود ہیں بس سے وکیل اتر رہے ہیں انہیں تھپڑ مارے جارہے ہیں ان میں خواتین بھی شامل ہیں، اور انہیں پولیس وین میں حوالات بھیجا رہا ہے۔

سابق وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم اس عمل کی شدید مذمت کرتے ہیں میں سمجھتا ہوں کہ یہ بوکھلاہٹ کا شکار ہیں جس کی وجہ لاہور میں ہونے والا وکلا کنوینشن ہے جس میں وکلا عمران خان کو مدعو کیا تھا، یہ ایک بے مثال کنونشن تھا۔انہوںنے کہاکہ اس کا نتیجہ یہ نکلا ہے انہوں نے کل بار کے لیے 20 کروڑ روپے کی گرانٹ منظور کی ، آٹا مہنگا ہوگیا اس کی سبسڈی کی فکر نہیں ہے، خریدو فروخت کی سیاست ان کا وتیرا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ کور کمیٹی کے اجلاس میں ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ اس ملک میں صاف شفاف انتخابات کیلئے ہماری جستجو جاری رہے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں